ایک اور دھاندلی زدہ الیکشن

موسم

قیمتیں

ٹرانسپورٹ

پاکستان انتخابی عمل کے دوران دھاندلی کے الزامات کے بعد غیر یقینی کی صورتحال پیدا ہوگئی ہے، جس نے 2024 کے عام انتخابات میں ووٹوں کی گنتی کے جاری عمل پر سایہ ڈالا ہے۔ جیسے ہی نتائج آنے کا سلسلہ تیسرے دن میں داخل ہورہا ہیسابق وزیر اعظم عمران خان کی پارٹی سے وابستہ امیدوار اپنے قائد کی قید کے باوجود اس وقت آگے ہیں۔ قابل ذکر بات یہ ہے کہ پی ٹی آئی رہنماؤں کو پارٹی نشان کے استعمال سے روکنے کے الیکشن کمیشن کے فیصلے نے انہیں مختلف بینرز کے نیچے انتخاب لڑنے پر مجبور کیا۔

266 نشستوں پر مشتمل اسمبلی میں، پی ٹی آئی کے حمایت یافتہ امیدواروں نے 92 نشستیں حاصل کرتے ہوئے نمایاں نمبر حاصل کیا ہے، اس کے بعد نواز شریف کی قیادت والی پاکستان مسلم لیگ ن (پی ایم ایل این) 71 نشستوں کے ساتھ دوسرے نمبر پر ہے۔ دریں اثنا، الیکشن کمیشن کی جانب سے 265 میں سے 255 نشستوں کے نتائج کے اعلان کے مطابق، پاکستان پیپلز پارٹی (پی پی پی) نے 54 نشستوں پر برتری حاصل کی ہے، اور متحدہ قومی موومنٹ (ایم کیو ایم) نے 17 نشستیں حاصل کی ہیں۔

عمران خان اور نواز شریف دونوں کی جیت کے دعوؤں کے باوجود کوئی بھی کیمپ واضح اکثریت حاصل کرنے کے قریب نہیں پہنچا۔ حکومت بنانے کے لیے 133 نشستوں کی ضرورت کے ساتھ، نتیجہ غیر یقینی ہے، خاص طور پر امیدوار کے انتقال کے بعد ایک نشست کے انتخابات کے ملتوی ہوگئے ہیں۔

تجزیہ کاروں نے مسلم لیگ (ن) کے مضبوط مظاہرے کا اندازہ لگاتے ہوئے اسے نواز شریف کے دیرینہ اثر و رسوخ اور فوجی اسٹیبلشمنٹ کی مبینہ حمایت کو قرار دیا۔ فوج کی مداخلت کے حوالے سے الزامات کی بھرمار ہے، عمران خان اور ان کے حامی ادارے پر انہیں نشانہ بنانے کا الزام لگاتے ہیں، فوج کی جانب سے ان دعوؤں کی سختی سے تردید کی گئی ہے۔

حتمی حکمران جماعت یا اتحاد سے قطع نظر، پاکستان کو آگے بڑھتے ہوئے مہنگائی اور گرتے ہوئے غیر ملکی ذخائر کی وجہ سے معاشی عدم استحکام کے باعث سنگین چیلنجوں کا سامنا ہے۔ ماہرین آنے والی حکومت کے لیے ضروری اصلاحات کی ایک فہرست کا خاکہ پیش کرتے ہیں، جس میں ٹیکس کے نظام کی بحالی، سبسڈی میں کمی، سرکاری اداروں کی نجکاری، اور غیر پیداواری اخراجات کو روکنا شامل ہیں۔

مزید برآں، حکومت کی قانونی حیثیت پر تشویش پائی جاتی ہے، جو کہ تحریک طالبان کے دوبارہ سر اٹھانے اور بلوچستان جیسے علاقوں میں ابھرتی ہوئی شورش جیسے سیکورٹی کے خطرات سے جڑی ہوئی ہے۔ اپنی سخت شرائط کے ساتھ بڑھتا ہوا IMF پروگرام معاشی حالت کو مزید بڑھاتا ہے، جو کسی بھی آنے والی انتظامیہ کے لیے زبردست رکاوٹیں پیش کرتا ہے۔پاکستان کے لیے بہتر ہو گا کہ جس جماعت کو اکثریت حاصل ہو اسے حکومت بنانے کی اجازت دی جائے اور 2018 کے انتخابات کی تاریخ نہ دہرائی جائے۔