الیکشن کمیشن کو قومی اسمبلی کے 265 میں سے 255 کے نتائج موصول

موسم

قیمتیں

ٹرانسپورٹ

الیکشن کمیشن کو غیر حتمی نتائج موصول ہونے کا سلسلہ جاری ہے، قومی اسمبلی کے 265 میں سے 255 حلقوں کے نتائج موصول ہوگئے۔

ذرائع کے مطابق قومی اسمبلی کے 265 میں سے 255 کے نتائج موصول ہوئے ہیں، 1 حلقہ کا نتیجہ روک لیا گیا، 9 حلقوں کے نتائج آنا باقی ہیں۔

قومی اسمبلی میں کامیاب ہونے والے آزاد امیدواروں کی تعداد 100 ہوگئی ہے، ن لیگ اب تک 73 نشستیں حاصل کر پائی ہے، پیپلزپارٹی کے 54 امیدوار کامیاب قرار پائے۔

ایم کیوایم کے 17 امیدوار بھی قومی اسمبلی میں پہنچ گئے، مسلم لیگ ق اور جے یو آئی کے تین 3 ارکان قومی اسمبلی میں پہنچ پائے،آئی پی پی کے دو امیدوار الیکشن جیت پائے۔

ایم ڈبلیوایم، بی این پی اور مسلم لیگ ضیاء کی قومی اسمبلی میں ایک ایک نشست بن پائی ہے۔

دوسری جانب پختونخوا ملی عوامی پارٹی (PKMAP) کے رہنما محمد خان اچکزئی نے بیرسٹر گوہر اور دیگر آزاد امیدواروں کو ایک مخلصانہ دعوت نامہ جاری کیا ہے اور ان پر زور دیا ہے کہ وہ قومی قیادت کے لیے پارٹی کے وژن کے ساتھ ہم آہنگ ہوں۔

کوئٹہ میں میڈیا سے خطاب کرتے ہوئے، اچکزئی نے PKMAP کی جمہوری اصولوں اور آئینی بالادستی کے لیے لگن پر زور دیا۔ انہوں نے پاکستان میں ”ایک آدمی، ایک ووٹ” کے بنیادی حق کو برقرار رکھنے کی بنیادی اہمیت کو اجاگر کیا، جمہوری اقدار کے لیے پارٹی کی ثابت قدمی کا اعادہ کیا۔

حالیہ انتخابی نتائج پر مایوسی کا اظہار کرتے ہوئے، اچکزئی نے انتخابی عمل میں مداخلت اور بے ضابطگیوں پر افسوس کا اظہار کیا۔

اچکزئی نے انتخابی نتائج میں مبینہ ہیرا پھیری کے بارے میں تشویش کا اظہار کیا، خاص طور پر بلوچستان میں، یہ کہتے ہوئے کہ ایسے افراد منتخب ہوئے ہیں جنہیں عوام نے منتخب نہیں کیا تھا۔