بھارتی مظالم

موسم

قیمتیں

ٹرانسپورٹ

مقبوضہ کشمیر میں بھارتی مظالم دنیا سے ڈھکے چھپے نہیں۔ پھر بھی، حال ہی میں مودی حکومت نے تمام حدیں پار کردیں، بی جے پی حکومت نے ورلڈ کپ فائنل میں آسٹریلیا سے کرکٹ ٹیم کی ذلت آمیز شکست کے بعد نعرے لگانے پر سات کشمیری طلباء کو گرفتار کیا۔

ماہرین کے مطابق کئی دہائیوں سے جب بھی بھارتی ٹیم کا میچ ہوتا ہے بھارتی جبر کو سہنے والے مقامی کشمیریوں کی جانب سے مخالف فریق کا ساتھ دینا ایک عام سی بات ہے۔ متنازعہ علاقے میں ہندوستانی سیکورٹی فورسز کی جانب سے استعمال کیے جانے والے سخت ہتھکنڈوں کے پیش نظر یہ ردعمل حیران کن نہیں ہے۔اس طرح کے واقعات کو روکنے کے لیے بھارتی حکومت کو چاہئے کہ وہ ایسے ہتھکنڈوں کا سہارا لینے کے بجائے، مایوسی کا شکار لوگوں کے دل جیتے۔

گرفتاریاں غیر قانونی سرگرمیوں کی روک تھام کے قانون (UAPA) کے تحت عمل میں لائی گئیں، اس قانون کو اعلیٰ ہندوستانی فقہا کے ذریعہ ”سخت” کے طور پر بیان کیا گیا ہے، یہ قانون لوگوں کو بغیر کسی ثبوت کے چھ ماہ تک ضمانت کے بغیر قید رکھنے کی اجازت دیتا ہے۔ جبکہ اس قانون کے تحت وزیر اعظم نریندر مودی کے تحت ملک بھر میں حکومت کے متعدد ناقدین، صحافیوں، کارکنوں اور اپوزیشن لیڈروں کو گرفتار کیا گیا ہے۔

اس قانون کا غلط استعمال واضح ہے، مودی کی پہلی میعاد کے دوران UAPA کے صرف 2% مقدمات درج ہوئے جن کے نتیجے میں سزائیں سنائی گئیں۔ ایک کیس میں دیکھا گیا کہ ایک فرد کو UAPA کے تحت سات سال قید میں رکھا گیا، بعد میں بغیر کسی الزام کے رہا کیا گیا۔2021 میں، ہندوستانی ٹیم کے خلاف پاکستانی فتح کا جشن منانے پر UAPA کے تحت سینکڑوں کشمیری طلباء کی تحقیقات کی گئیں، جس کے نتیجے میں کئی کو سرکاری عہدوں سے برطرف کر دیا گیا۔

حالیہ گرفتاریوں کے بعد پولیس کے ایک بیان میں بنیادی طور پر اس بات کا اعتراف کیا گیا ہے کہ ”بھارت نواز” موقف کے ساتھ موافقت نہ کرنا دہشت گردی کی کارروائی تصور کیا جاتا ہے۔ ایسا لگتا ہے کہ بھارت گرفتاری کی دھمکی کے تحت لوگوں کو ‘حب الوطنی’ کا مظاہرہ کرنے پر مجبور کر رہا ہے۔دنیا کی سب سے بڑی جمہوریت کو برداشت کا مظاہرہ کرنا چاہیے کیونکہ حب الوطنی کو زبردستی پیدا نہیں کیا جا سکتا۔