مقصود چپڑاسی کون تھے اور اُن کی موت کیسے ہوئی؟

مقصود چپڑاسی کون تھے اور اُن کی موت کیسے ہوئی؟

ملک کی اکثریت مقصود عرف مقصود چپڑاسی کی موت کی خبر سن کر کافی پریشان ہے۔

اُن کی اس اچانک موت نے کافی سوالات کو جنم دیا ہے کہ وہ کون تھے اور ان کی موت کیسے ہوئی؟

مقصود چپڑاسی

مقصود چپڑاسی شریف خاندان کے خصوصی ملازم تھے۔ وہ 48 سال کے تھے اور دل کے عارضے میں مبتلا ہونے کی وجہ سے دبئی میں مقیم تھے۔

دردناک موت

اطلاعات کے مطابق مقصود چپڑاسی دو روز قبل دبئی میں اپنے اپارٹمنٹ میں مردہ حالت پائے گئے تھے۔ خیال رہے کہ ان کی موت دل کا دورہ پڑنے کی وجہ سے ہوئی۔ تاہم، ایسی قیاس آرائیاں بھی کی جارہی ہیں کہ اُن کے ہاتھوں پر کسی مبینہ شخص کے نشانات پائے گئے ہیں۔

بتایا جاتا ہے کہ اس سے قبل ایف آئی اے کے سابق ڈائریکٹر ڈاکٹر رضوان بھی حرکت قلب بند ہونے سے انتقال کر گئے تھے۔ وہ رمضان شوگر ملز کیس میں شہباز شریف اور ان کے خاندان کے خلاف ایف آئی اے کی تمام تحقیقات کی صدارت کر رہے تھے۔

منی لانڈرنگ کیس

مقصود، وزیر اعظم شہباز شریف اور وزیر اعلیٰ پنجاب حمزہ شہباز کے خلاف 16 ارب روپے کے منی لانڈرنگ کیس میں شریک ملزم اور اہم شخصیت تھے۔

سابق وزیراعظم عمران خان نے متعدد مواقع پر مقصود چپڑاسی کا نام اور ان پر لگائے گئے الزامات کو سامنے رکھا۔ اس واقعے کے حوالے سے عمران خان کے بار بار حوالے نے منی لانڈرنگ اور مسلم لیگ (ن) کے مبینہ طور پر ملوث ہونے کے بارے میں بحث دوبارہ شروع کردی۔

خیال رہے کہ مقصود احمد کا نام وزیراعظم شہباز شریف اور وزیراعلیٰ پنجاب حمزہ شہباز کے خلاف اربوں روپے کی منی لانڈرنگ کیس میں استعمال ہوتا رہا ہے اور پاکستان تحریک انصاف کے دور میں مشیر برائے احتساب شہزاد اکبر بارہا دعویٰ کر چکے ہیں کہ شہباز شریف اور حمزہ شہباز نے ذاتی ملازم مقصود چپڑاسی کے اکاؤنٹ میں کروڑوں روپے منتقل کیے۔

تبصرے: 0

آپ کا ای میل پتہ شائع نہیں کیا جائے گا۔ مطلوبہ فیلڈز * کے ساتھ نشان زد ہیں