نوازشریف کی حالت تشویشناک ، میڈیکل بورڈ کاڈسچارج کرنے سے انکار

موسم

قیمتیں

ٹرانسپورٹ

لاہور: سابق وزیراعظم نواز شریف کی حالت ایک بار پھر بگڑگئی ہے، نوازشریف کی صحت کے حوالے سے ڈاکٹروں نے اگلے 48 گھنٹے تشویش ناک قرار دے دیے۔

واز شریف کی صحت کے معاملہ پر ڈاکٹرز کی تشویش بڑھنے لگی ہے کیوں کہ پلیٹ لیٹس کے لیے لگائے جانے والے انجکشنز اور اسٹیرائیڈز نواز شریف کے لیے مزید طبی مسائل کھڑے کرنے لگے ہیں، جب کہ انہیں میگاکٹس لگانے پر گردے خراب ہونے کا بھی خدشہ ہے۔

میڈیکل بورڈ نواز شریف کو مزید میگا کٹس لگانے یا نہ لگانے کا فیصلہ نہیں کرسکا، نواز شریف کو اسٹیرائیڈز دینے سے گردے متاثر ہونے لگے ہیں، میگا کٹس نہ لگائیں تو پلیٹ لیٹس نہیں بڑھ سکتے اور اگر میگا کٹس لگائیں تو گردوں کو نقصان پہنچے گا لہذا ڈاکٹرز اس معاملے پر شش و پنج کا شکار ہیں۔

میڈیکل بورڈ کے مطابق گزشتہ روز نوازشریف کے پلیٹ لیٹس میں دوبارہ کمی ہوگئی اور ان کے پلیٹ لیٹس 45 ہزار سے کم ہوکر 25 ہزار ہوگئے۔

میڈیکل بورڈ کے مطابق نوازشریف کو دل کےعارضے کی ادویات کی وجہ سے پلیٹ لیٹس میں کمی ہوئی لہٰذا انہیں ہارٹ اٹیک کے بعد دی جانیوالی دوائی بندکردی گئی تھی جس کے بعد ان کی پلیٹیلیٹس کی تعداد بڑھ جائے گی۔

یہ بھی پڑھیں: نوازشریف نے بیرون ملک علاج کروانے پر رضامندی ظاہر کردی

میڈیکل بورڈ ذرائع کا کہنا ہے کہ نواز شریف کے دل اور گردوں کی دوا دیں تو پلیٹ لیٹس کم ہوجاتے ہیں جبکہ انہیں بڑھانے کی دوا دیں تو دل اور گردے متاثر ہوتے ہیں۔

بورڈ ذرائع کا کہنا ہے کہ نواز شریف کا بلڈ یوریا بھی بڑھ گیا ہے جو نارمل رینج 50 سے بڑھ کر 63 ہوگیا ہے، میڈیکل بورڈ نواز شریف کے فیملی ڈاکٹر سے مشورہ کے بعد مزید فیصلہ کرسکے گا۔

سربراہ میڈیکل بورڈ ڈاکٹر محمود ایاز کا کہنا ہے کہ نواز شریف کی حالت تاحال ناساز ہے، ان کے پلیٹ لیٹس کی تعداد غیر متوقع طور پر تیزی سے اپ ڈاؤن ہو رہی ہے، ابھی پلیٹلیٹس کی تعداد 25 ہزار ہے تاہم ان کی طبیعت 30 ہزار تک پہنچنے کے بعد نارمل تصور ہوگی۔