زندگی کی تلاش جاری، جنوبی کوریا کا پہلا خلائی مشن چاند کی طرف روانہ

زندگی کی تلاش جاری، جنوبی کوریا کا پہلا خلائی مشن چاند کی طرف روانہ

کیپ کیناورل: چاند پر زندگی کی تلاش جاری ہے۔ جنوبی کوریا نے  اپنے پہلے خلائی جہاز کو امریکی ریاست فلوریڈا سے اسپیس ایکس کے فالکن 9 راکٹ کے ذریعے روانہ کردیا۔

تفصیلات کے مطابق جنوبی کوریا کے خلائی جہاز کا نام دانوری رکھا گیا ہے جس کا مطلب چاند پر سفر کا مزہ لینا لیا جاسکتا ہے جو سفر کے آغاز سے 40 منٹ بعد ہی راکٹ سے الگ ہوگیا اور چاند کی طرف اکیلے سفر شروع کیا۔ خلائی جہاز رواں برس دسمبر میں چاند پر پہنچے گا۔

یہ بھی پڑھیں:

فیس بک کا لائیو شاپنگ فیچر ختم کرنے کا اعلان

جنوبی کورین مشن کا مقصد چاند کے مقناطیسی میدان میں تحقیق کرنا اور چاند پر پائی جانے والی مٹی کے مختلف عناصر کا تجزیہ، پانی اور چاند پر زندگی کے امکانات تلاش کرنا ہے۔ مشن کے ذریعے چاند کے تاریک گڑھوں کی تصاویر کھینچنا بھی مقصود ہے جہاں سورج کی روشنی نہیں پہنچ پاتی۔

خلائی مشن کو گاما رے اسپیکٹرو میٹر، میگنٹ میٹر اور 3 کیمروں سے لیس کیا گیا جن میں سے 1 تاریک مقامات کی تصاویر کھینچنے کی صلاحیت رکھتا ہے۔ چاند کے تاریک گڑھوں میں برف کی موجودگی پر شواہد اکٹھے کیے جائیں گے۔ تمام تر تحقیقی کام کم و بیش 1سال میں مکمل ہونے کی توقع کی جارہی ہے۔

واضح رہے کہ کسی بھی خلائی مشن کی تکمیل کے بعد یا تو خلائی جہازوں کو تباہ کردیا جاتا ہے یا پھر مشن میں توسیع کر لی جاتی ہے۔ اب تک چین، جاپان، امریکا، روس، بھارت اور یورپین خلائی ایجنسی کے مشن چاند کی طرف روانہ کیے جاچکے ہیں جبکہ جنوبی کوریا کا یہ پہلا مشن ہوگا۔

کورین صدر لی سینگ ریول کا کہنا ہے کہ خلائی مشن کی چاند کو روانگی کوریا کی خلائی تحقیق میں ایک بڑا سنگِ میل ہے۔ صدر کی ویڈیو مشن کے آغاز سے قبل کوریا ایرواسپیس ریسرچ انسٹیٹیوٹ میں دکھائی گئی جس میں انہوں نے خلائی مشن بھیجنے والے ماہرین کی محنت اور قابلیت کو سراہا۔

خلائی مشن کی تحقیق کا مقصد یہ بھی ہے کہ مستقبل کے خلائی مشنز کیلئے چاند پر اترنے کی ممکنہ جگہیں تلاش کی جائیں۔ ایک آلے کی مدد سے نیٹ ورک پر مبنی خلائی ذرائع ابلاغ پر بھی تحقیق کی جائے گی جو دنیا میں کسی بھی خلائی مشن کیلئے ایک پہلی کوشش قرار دی جارہی ہے۔ 

تبصرے: 0

آپ کا ای میل پتہ شائع نہیں کیا جائے گا۔ مطلوبہ فیلڈز * کے ساتھ نشان زد ہیں