MM NEWS URDU
Friday 7th October 2022 / 11 Rabiulawal 1444

پنجاب کا سیاسی بحران

پنجاب اسمبلی میں گزشتہ چند دنوں کے دوران ہونے والے واقعات واقعی ایک تماشہ ہیں۔ صوبائی اسمبلی میں کبھی ایسا ہنگامہ اور افراتفری دیکھنے میں نہیں آئی کہ حکومت بجٹ پیش کرنے سے بھی قاصر رہی ہو۔ قانون سازوں نے جمہوری عمل، پارلیمنٹ اور خود کو شرمندہ کیا ہے۔

وزیراعلیٰ بننے کی ناکام کوشش کرنے والے رکن پنجاب اسمبلی پرویز الٰہی نے بجٹ اجلاس نہ کر کے حمزہ شہباز سے معاملات طے کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ وہ چاہتے ہیں کہ حکومت لانگ مارچ کے دوران پی ٹی آئی کی حمایت پر تشدد کرنے پر معافی مانگے اور مقدمات واپس لے۔ حکومت نے آئی جی پنجاب اور چیف سیکرٹری کو پارلیمنٹ میں طلب کرنے کے ان کے مطالبات ماننے سے انکار کر دیا۔

مسلم لیگ ن بھی اس مسئلے کا حصہ ہے کیونکہ اس کے پاس بجٹ پاس کرنے کے لیے مطلوبہ تعداد نہیں ہے۔ حمزہ نے وزیراعلیٰ بننے کے لیے پی ٹی آئی کے مخالفین کی حمایت پر انحصار کیا لیکن انہیں نااہل قرار دے دیا گیا ہے۔ ان کے دوبارہ انتخاب کے لیے ضمنی انتخابات اگلے ماہ ہوں گے۔ حکومت بجٹ پیش کر بھی لے تو اسمبلی سے پاس نہیں ہو سکے گا۔

پرویز الٰہی جیسے تجربہ کار سیاستدان کو اپنے عہدے کا استعمال اسکور طے کرنے اور جمہوری نظام کو تباہ کرنے کے لیے نہیں کرنا چاہیے۔ سپیکر غیر جانبدار ہو اور قواعد و ضوابط کے مطابق کارروائی کرے۔ لیکن یہ مختلف حالات ہیں اور مسلم لیگ (ن) کو احساس ہے کہ وہ مزید مشکلات پیدا کرے گی۔ چونکہ مسلم لیگ (ن) انہیں فوری طور پر ہٹا نہیں سکتی، اس لیے اسپیکر کے اختیارات روکنے کی اطلاعات ہیں۔

ملکی تاریخ میں شاید یہ پہلا موقع ہے کہ حکومت بجٹ پیش کرنے سے قاصر رہی ہے۔ اس بڑے صوبے کو گزشتہ چند ماہ سے سیاسی اور معاشی بحران کا سامنا ہے جس کے ختم ہونے کے کوئی آثار نظر نہیں آتے۔ معاملات کو مزید گھمبیر بنانے کے لیے پنجاب اسمبلی کے ایک ہی دن میں دو الگ الگ اجلاس بھی طلب کیے گئے۔

پچھلے دو دنوں میں آئینی عمل مکمل طور پر ٹوٹ پھوٹ کا شکار رہا۔ پارلیمنٹ میں خزانے اور اپوزیشن دونوں کے قانون سازوں کی ہنگامہ آرائی سے سارا دن اور وسائل ضائع ہو گئے۔ دونوں طرف سے ڈیڈ لاک برقرار رہا اور بجٹ تقریر سٹینڈ پر ہی رہ گئی۔

دونوں فریقین کو ایوان صدر کے تقدس کو برقرار رکھنا چاہیے۔ سپیکر کو اپنے اختلافات کو ختم کرنا چاہئے اور کارروائی چلانی چاہئے یا ایک طرف ہٹ جانا چاہئے۔ انہیں احساس ہونا چاہیے کہ بجٹ پیش نہ کر کے سب سے بڑے صوبے کے عوام کو ان کے آئینی حق سے محروم کیا جا رہا ہے۔

کیا آپ بھی جعلی خبروں سے پریشان ہیں؟ تو ڈاؤن لوڈ کریں ایم ایم نیوز کی اپلیکیشن اور جانبدار خبروں سے جان جھڑائیں
Exit mobile version