سی پیک بے فائدہ شجر

ندیم مولوی


کالم نگار معاشی تجزیہ کار ہیں۔

 چین پاکستان اقتصادی راہداری جو اس وقت 46 بلین ڈالر کی لاگت سے زیر تعمیر ہے اس کو پاکستان کے لئے گیم چینجر سمجھا جاتا تھا۔ اس کا مقصد ہمارے بنیادی ڈھانچے کو ترقی دینا اور پاکستان اور چین دونوں ممالک کے مابین معاشی اور سیاسی تعلقات کو گہرا کرنا ہے۔ حقیقت یہ ہے کہ سی پیک نے پاکستان کے لئے کوئی قابل ذکر کامیابی حاصل نہیں کی اور یہ ہماری معاشی حالت کو مزید خراب کردے گی۔

سی پیک کو چین کی بیلٹ اور روڈ انیشی ایٹو (بی آر آئی) کا پرچم بردار سمجھا جاتا ہے لیکن اس کی پیشرفت رک گئی ہے اوریہ منصوبہ پہلے دن سے ہی چینیوں کے حق میں جھکا ہوا تھا کیونکہ وہ اپنے مغربی خطے کو دوبارہ تعمیر کرنا چاہتے تھے کیونکہ انھیں زیادہ اخراجات برداشت کر رہے تھے۔ چینیوں کے پاس اپنے ذاتی مفادات کے لئے سی پیک بنانے کے علاوہ کوئی آپشن نہیں ہے۔ ہمارے قائدین نے جو سرمایہ کاری کے اعدادوشمار ہمیں دکھائے ہیں وہ حقیقت پسندانہ بھی نہیں ہیں اور جو منصوبے جاری ہیں یا مکمل ہوچکے ہیں وہ نہ ہونے کے برابر ہیں۔

سی پیک پاکستان میں چین کی معاشی موجودگی کی نمایاں توسیع کی نمائندگی کرتا ہے لیکن ہمیں میگاپروجیکٹ سے کسی بھی طرح فائدہ نہیں ہوا۔سی پیک میں ایک معمولی نظر ثانی کی گئی ہے اور ہائیڈرو پاور پروجیکٹس ، موٹر ویز اور ریلوے منصوبوں کو شامل کیا گیاہے۔ پاکستان موجودہ منصوبوں پر ادائیگی کی مدت میں توسیع کرنے اور بڑھتے ہوئے قرضوں سے نمٹنے پر چین سے مذاکرات کرتا رہا ہے تو ایسے میں سوال بنتا ہے کہ کیا واقعی یہ چینی سرمایہ کاری یا اپنے پیسوں سے بنایا جارہا ہے؟۔

وبائی امراض کے دوران ہماری معیشت نمایاں طور پر کمزور ہوئی اور ہم ان منصوبوں کی مالی اعانت کرنے کی پوزیشن میں نہیں ہیں۔

حکومت ان منصوبوں کے لئے قرض لے رہی ہے جن کے بارے میں چینیوں کی مالی اعانت تھی۔ یہ ہماری ناکامی ہے کہ ہم نے اس طرح کی سخت شرائط کو میز پر نہیں رکھا۔ چینیوں نے ہماری زمین ، مزدوری اور وسائل بروئے کار لائے ، وہ ہمارے پیسوں سے منصوبے بنا رہے ہیں اور ہمارے قرضوں میں اضافہ کر رہے ہیں۔ ان منصوبوں میں نہ تو ہمیں اپنی زمینوں ، روزگار کے مواقع یا شراکت کا معاوضہ دیا گیا ہے۔

چینیوں نے ہمارا فائدہ اٹھایا ہے اور اپنی مصنوعات کو ان کے ملک واپس بھیج دیا ہے۔ ہم پہلے ہی عالمی مالیاتی اداروں کے رحم و کرم پر تھے اور اب چینیوں کے مقروض ہوں گے۔

سی پیک اب خصوصی اقتصادی زون (ایس ای زیڈ) کے قیام کے ساتھ آگے بڑھنے پر مرکوز ہے۔ یہ دس سال کی ٹیکس چھوٹ فراہم کرتے ہیں جو صرف ٹیکس ادا کیے بغیر اپنی فیکٹریاں اور ریفائنری قائم کرنے میں چینیوں کو فائدہ پہنچاتے ہیں۔

ان زونز سے باہر قائم کاروباری افراد کو کوئی مراعات نہیں ملیں گی جب کہ ہم اس فریب میں رہ رہے ہوں گے کہ غیر ملکی سرمایہ کاری آرہی ہے۔ اس کے بدلے میں پاکستانی عوام کو مونگ پھلی کی پیش کش کی جا رہی ہے۔

ہم اس تاثر میں رہیں گے کہ سی پیک ہمارے ملک کی تقدیر بدل دے گا اور جدید انفراسٹرکچر کا ایک وسیع نیٹ ورک رکھے گااور ایسا لگتا ہے کہ ہم سب سے بڑے نادہندہ بن کر ختم ہوجائیں گے۔ہمارے قائدین صرف نمائشی پالیسیوں پر توجہ مرکوز کرتے ہیں، ہم اکثر ورلڈ بینک اور آئی ایم ایف کی طرف بھاگتے ہیں لیکن وہ دن دور نہیں جب ہم بھیک مانگنے والے کٹورے کے ساتھ چینیوں کی طرف جارہے ہوں گے۔

کیا آپ بھی جعلی خبروں سے پریشان ہیں؟ تو ڈاؤن لوڈ کریں ایم ایم نیوز کی اپلیکیشن اور جانبدار خبروں سے جان جھڑائیں