نیوزی لینڈ کا الیکٹرک کاروں کی فروخت میں اضافہ کرنے کا فیصلہ

نیوزی لینڈ کا الیکٹرک کاروں کی فروخت میں اضافہ کرنے کا فیصلہ

نیوزی لینڈ کے وہ لوگ جو اپنی گیس سے چلنے والی کار وں میں تجارت کرتے ہیں، انہیں ایک صاف ستھرا متبادل خریدنے کے لیے مالی امداد دی جائے گی، جس کا اعلان وزیر اعظم جیسنڈا آرڈرن کی حکومت نے پیر کو موسمیاتی تبدیلی کے اقدامات کے ایک پروگرام میں کیا ہے۔

ملک میں آلودگی کے خاتمے کا منصوبہ جس کی لاگت تقریباً تین بلین NZ ڈالر (1.88 بلین امریکی ڈالر) ہے، نے 2050 تک کاربن ڈائی آکسائیڈ کے اخراج کو صفر تک کم کرنے کے اپنے ہدف کو پورا کرنے میں مدد کے لیے اگلے چار سالوں کے اخراجات کا خاکہ پیش کیا۔

“اسکریپ اینڈ ریپلیس”پائلٹ اسکیم ابتدائی طور پر 2,500 کم آمدنی والے خاندانوں کو الیکٹرک یا ہائبرڈ گاڑی کے لیے مالی معاونت فراہم کرے گی اگر وہ اپنی پیٹرول یا ڈیزل سے چلنے والی کار کو تبدیل کرنے کی کوشش کریں گے۔

ٹرانسپورٹ کے وزیر مائیکل ووڈ کے مطابق اسکیم کی تفصیلات کو حتمی شکل دینا ابھی باقی ہے لیکن انہوں نے تصور کیا کہ اس میں تیزی سے توسیع ہوگی جس نیوزی لینڈ کے ہزاروں باشندے شامل ہوں گے۔

انہوں نے کہا کہ حکومت کا حتمی مقصد 2035 تک تمام کاروں پر کم انحصار کرنا ہے تاکہ لوگوں کو پبلک ٹرانسپورٹ یا دیگر متبادلات کی طرف راغب کیا جائے۔

حکومت نے اگلے چار سالوں میں صنعتی شعبے میں جیواشم ایندھن کے استعمال کو کم کرنے میں مدد کے لیے 650 ملین NZ ڈالر بھی مختص کیے ہیں۔

زرعی ٹیکنالوجی کی ترقی میں بھی سرمایہ کاری کی جائے گی، جسے کاشتکاری کی برآمدات پر بہت زیادہ انحصار کرنے والی معیشت میں اہم سمجھا جاتا ہے۔

مزید پڑھیں:واٹس ایپ نے ایک اور فیچر پر کام کرنا شروع کردیا

تبصرے: 0

آپ کا ای میل پتہ شائع نہیں کیا جائے گا۔ مطلوبہ فیلڈز * کے ساتھ نشان زد ہیں