گندم کی درآمد

معیشت کو بہتر بنانے کا حکومتی منصوبہ اس وقت ناکام ہو گیا جب حکومت نے گندم کی قلت کے خلاف قدم اُٹھاتے ہوئے 30 لاکھ میٹرک ٹن گندم درآمد کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ نقد ادائیگیوں پر گندم خریدنے کا فیصلہ یقینی طور پر گرتے ہوئے غیر ملکی ذخائر کو کم کرے گا اور تجارتی خسارے کو مزید بڑھا دے گا۔

ای سی سی نے G2G کی بنیاد پر 20 لاکھ ٹن اور بین الاقوامی ٹینڈرنگ کے عمل سے مزید 10 لاکھ ٹن گندم درآمد کرنے کی منظوری دے دی ہے۔ پاکستان مہنگی ترین گندم خریدے گا۔ ٹریڈنگ کارپوریشن آف پاکستان (TCP) کو 515.49 ڈالر فی ٹن کی کم ترین قیمت جاری کی گئی ہے جو کہ اکتوبر 2021 کے نرخوں سے تقریباً 45 فیصد زیادہ ہے۔

معلوم ہوا ہے کہ یوکرین پر حملے کے بعد ماسکو پر عائد پابندیوں کے باعث حکومت روس سے نقد رقم پر گندم خریدے گی۔ گندم کی عالمی پیداوار میں روس اور یوکرین دونوں کا حصہ 30 فیصد ہے۔ روس سے اناج کی درآمد پر کوئی پابندی نہیں ہے لیکن حکومت کو بینکنگ سیکٹر کی پابندیوں کی وجہ سے ادائیگیوں کے لیے ایک طریقہ کار وضع کرنا ہوگا۔

پاکستان خوراک کی پیداوار کے حوالے سے بہت پیچھے چلا گیا ہے، ملک کو خوردنی تیل، گندم، چینی، چائے اور دالوں سمیت اہم غذائی اشیاء درآمد کرنے کی فوری ضرورت ہے۔ گندم کی پیداوار 26.3 ملین ٹن ہے اور ملکی ضروریات کو پورا کرنے اور اسٹریٹجک ذخائر کی تعمیر کے لیے 50 لاکھ ٹن کی کمی ہے۔

یکے بعد دیگرے آنے والی حکومتیں ضروری فصلوں کی پیداوار بڑھانے میں ناکام رہی ہیں۔ گندم کی کمی کی وجہ موسمیاتی تبدیلی، گرم موسم، پانی کی قلت اور کھاد کی بڑھتی ہوئی قیمتیں ہیں۔ یہاں تک کہ یوریا کی سپلائی بھی کم ہے اور اسے درآمد کرنے کی ضرورت ہے۔ فروری کے اوائل میں ہی گندم کی قلت کے خدشات کا اظہار کیا گیا لیکن حکومت کی جانب سے کوئی فیصلہ نہیں کیا گیا اور قوم کو اس کی قیمت چکانی پڑے گی۔

پاکستان بدستور درآمدات پر انحصار کرنے والا ملک ہے،خاص طور پر غذائی اشیاء۔ حکومت نے حال ہی میں ‘لگژری آئٹمز’ کی درآمد پر پابندی عائد کی ہے لیکن اس فیصلے کا کوئی خاص اثر نہیں ہو رہا۔ ہمیں خوراک کی درآمدات پر انحصار کم کرنے کی ضرورت ہے۔ یہاں تک کہ مقامی صنعت بھی اپنی مصنوعات کے لیے خام مال درآمد کرتی ہے۔ حکومت کو اشیائے خوردونوش کی پیداوار بڑھانے کے لیے طویل المدتی اسٹریٹجک منصوبے پر کام کرنے کی ضرورت ہے تاکہ ہم درآمدات پر کم انحصار کریں اور اپنی معیشت کو بہتر بنا سکیں۔

تبصرے: 0

آپ کا ای میل پتہ شائع نہیں کیا جائے گا۔ مطلوبہ فیلڈز * کے ساتھ نشان زد ہیں